بارہ سال کے لڑکے کو انزال ہوتوبالغ ہے؟

 سوال نمبر 2289

السلام علیکم ورحمة اللہ وبرکاتہ۔
الاستفتاء:کیا فرماتے ہیں علمائے دین ومفتیانِ شرع متین اس مسئلہ میں کہ اگر کوئی بارہ سال کا لڑکا بدکاری کرے اور انزال ہو جائے تو کیا وہ بالغ شمار کیا جائے گا؟ برائے کرم جواب عنایت فرمائیں ۔
(سائل:محمد رضوان رضا سورت گجرات)
وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاتہ۔

باسمہ تعالیٰ وتقدس الجواب:وہ لڑکا بالغ شمار ہوگا۔چنانچہ علامہ ابو الحسین احمد بن محمد قدوری حنفی متوفی٤٢٨ھ لکھتے ہیں:بلوغ الغلام بالاحتلام والانزال والاحبال اذا وطئ۔(مختصر القدوری،١٩٤)
یعنی،لڑکے کا بلوغ احتلام، انزال یا عورت کے ساتھ جماع کرکے اسے حاملہ کردینے سے ہے۔

   اور امام علاء الدین ابو بکر بن مسعود کاسانی حنفی متوفی٥٨٧ھ لکھتے ہیں:البلوغ فی الغلام یعرف بالاحتلام والاحبال والانزال۔
(بدائع الصنائع،١٧١/٧)
یعنی،لڑکے کا بالغ ہونا احتلام، حاملہ کردینے یا انزال کے ذریعے معلوم ہوتا ہے۔واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب
کتبہ:۔
محمد اُسامہ قادری
پاکستان، کراچی
منگل،٢٨/ربیع الاول،١٤٤٤ھ۔٢٥/اکتوبر،٢٠٢٢ء









ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Created By SRRazmi Powered By SRMoney