ماں، باپ دادا، دادی،چچا، بیٹے اور بیٹیوں میں ترکہ کیسے تقسیم ہو؟


سوال نمبر 2138

 السلام علیکم ورحمةاللہ وبرکاتہ 

الاستفتاء:کیا فرماتے ہیں علماٸے دین ومفتیانِ شرع متین اس مسٸلے میں کہ ورثاء میں ماں، باپ، دادا، دادی، چار بیٹے، چار بیٹیاں، اور ایک چچا ہوں، تو ان کے درمیان مرحوم بکر کا ترکہ کس طرح تقسیم ہوگا؟

المستفتی ۔۔۔ غلام عبدالقادر نظامی سدھارتھنگر ۔ 



وعلیکم السلام ورحمةاللہ وبرکاتہ 

الجواب بعون الملک الوھاب ۔۔۔

 صورت مسئولہ میں میت کے ترکہ سے ترتیب وار کل چار طرح کے حقوق متعلق ہوتے ہیں ۔

اول ۔ اس کے مال سے میت کی تجہیز وتکفین کی جاۓ ۔

دوم-  اس کے مال سے میت دیون ادا کئے جائیں ۔

سوم _ اس کے تہائی مال سے میت کی وصیت پوری کی جاۓ ۔ 

چہارم ۔ اس کے بعد بچے ہوۓ مال و جائداد میں سے میت ورثہ کے درمیان میراث تقسیم کی جاۓ ۔


جیساکہ فتاوی عالمگیری جلد ٦ صفحہ ٤٤٧ میں ہے ،،


التَّرِكَةُ تَتَعَلَّقُ بِهَا حُقُوقٌ أَرْبَعَةٌ: جِهَازُ الْمَيِّتِ وَدَفْنُهُ وَالدَّيْنُ وَالْوَصِيَّةُ وَالْمِيرَاثُ. فَيُبْدَأُ أَوَّلًا بِجَهَازِهِ وَكَفَنِهِ وَمَا يُحْتَاجُ إلَيْهِ فِي دَفْنِهِ بِالْمَعْرُوفِ،ثُمَّ بِالدَیْنِ ثُمًّ تُنَفَّذُ وَصَايَاهُ مِنْ ثُلُثِ مَا يَبْقَى بَعْدَ الْكَفَنِ وَالدَّيْنِ إلَّا أَنْ تُجِيزَ الْوَرَثَةُ أَكْثَرَ مِنْ الثُّلُثِ ثُمَّ يُقَسَّمُ الْبَاقِي بَيْنَ الْوَرَثَةِ عَلَى سِهَامِ الْمِيرَاثِ،)

اھ ملخصا ۔


 صورت مسئولہ میں بعد تقدیم ماتقدم وانحصارورثہ فی المذكورین مرحوم بکر کے کل مال متروکہ کے چھ حصہ کیا جاۓ ایک (سدس) چھٹواں حصہ اس کے باپ کو اور ایک چھٹواں حصہ اس کے ماں ملے گا ۔ 


ارشادباری تعالی ہے :۔ 


لِاَبَوَیْهِ لِكُلِّ وَاحِدٍ مِّنْهُمَا السُّدُسُ مِمَّا تَرَكَ اِنْ كَانَ لَهٗ وَلَدٌۚ-


میت کے ماں باپ میں ہر ایک کو اس کے ترکہ سے چھٹا اگر میت کے اولاد ہو


(پارہ ٤ سورہ النساء آیت ١١)


ایک ایک حصہ دینے کے بعد بچے چار حصے اس میں بارہ حصے کئے جائیں گے پھر اس میں سے دو دو حصہ ہر ایک لڑکے کو دیاجاۓگا اور ایک ایک حصہ ہرایک لڑکی کو دیاجاۓگا ۔ 


ارشادباری تعالی :۔ 


یُوْصِیْكُمُ اللّٰهُ فِیْۤ اَوْلَادِكُمْۗ-لِلذَّكَرِ مِثْلُ حَظِّ الْاُنْثَیَیْنِۚ-

ترجمہ: اللّٰہ (عزوجل) تمہیں حکم دیتا ہے تمہاری اولاد کے بارے میں بیٹے کا حصہ دو بیٹیوں کے برابر ہے


(پارہ ٤ سورہ النساء آیت ١١)


بہارشریعت جلدسوم حصہ بستم صفحہ ١١٢٢ میں ہے ،، 

باپ کی ماں ، باپ کے ہوتے ہوئے میراث سے محروم ہوگی مگر دادا کے ہوتے ہوئے محروم نہ ہوگی۔(1) (شریفیہ ص۲۴)

جب باپ نہ ہوتو دادا (جد صحیح) سوائے چند صورتوں کے باپ ہی کی طرح ہے۔(2)(سراجی ص۷، شریفیہ ص۲۴


لھذا معلوم ہوا کہ باپ کی موجودگی میں دادا دادی اور چچا سب محروم ہونگے ۔ 



مسئلہ ٦ = ١٨


باپ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔٣ 

ماں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ٣

بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔٢

بیٹا۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔٢

بیٹا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔٢

بیٹا۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔٢


بیٹی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔١

بیٹی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔١

بیٹی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔١

بیٹی۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔١

دادا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محروم 

دادی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محروم 

چچا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محروم 


وھوسبحانہ تعالی اعلم بالصواب 


کتبه 


العبد ابوالفیضان محمد عتیق اللّه صدیقی فیضی یارعلوی ارشدی عفی عنہ 

دارالعلوم اھلسنت محی الاسلام 

بتھریاکلاں ڈومریا گنج سدھارتھنگر یوپی ۔ 

١١ ذی القعدہ ١٤٤٣ھ

١٢ جون ٢٠٢٢ء









ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Created By SRRazmi Powered By SRMoney