راکھی بیچنا کیسا ہے؟

سوال نمبر 2175

 السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

 علمائے کرام کی بارگاہ میں عرض ہے کہ زید راکھی بیچنے کا کام کرتا ہے تو کیا زید کو راکھی بیچنا جائز ہے جواب عنایت فرمائیں مہربانی ہوگی ۔

المستفتی۔ احمد رضا امروہہ یوپی



وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ 

بسم اللہ الرحمن الرحیم 

الجواب بعون الملک الوھاب 

راکھی کی تجارت ناجائز و حرام ہے بلکہ دور حاضر میں راکھی باندھنا کفار کا مذہبی شعار بن چکا ہے اسلئے اس کی تجارت بھی ناجائز و گناہ ہے اور گناہ پر اعانت بھی ناجائز ہے    

اللہ پاک ارشاد فرماتا ہے 

وَلَا تَعَاوَنُوا عَلَى الْإِثْمِ وَالْعُدْوَانِ ۚ

ترجمہ کنزالایمان:- اور گناہ اور زیادتی پر باہم مدد نہ دو (سورہ مائدہ آیت ٢)

نیز فتاوی مرکز تربیت افتا ٕ ،ج٢،ص٢٣٨،پر بھی ایسا ہی ہے.

واللہ اعلم بالصواب۔

کتبہ

 محمد مدثر جاوید رضوی 

مقام۔ دھانگڑھا، بہادر گنج

 ضلع۔ کشن گنج، بہار









ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Created By SRRazmi Powered By SRMoney